قیمتوں میں مسلسل اضافے کے ساتھ ایندھن کی کھپت کم ہوتی جارہی ہے۔

جیو نیوز نے رپورٹ کیا کہ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں مسلسل اضافے سے ملک میں گزشتہ ماہ کے دوران ایندھن کی کھپت میں کمی دیکھنے میں آئی ہے۔ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے ساتھ معاہدہ کرنے کی کوشش میں، موجودہ حکومت نے ایندھن کی سبسڈی ہٹا دی ہے اور 36 دنوں میں تیسری بار ایندھن کی قیمتوں میں اضافہ کیا ہے۔

اتحادی حکومت نے سب سے پہلے 26 مئی کو پیٹرول کی قیمت میں 30 روپے کا اضافہ کیا تھا، اس کے بعد 2 جون کو 30 روپے کا مزید اضافہ کیا گیا تھا۔ 15 جون کو اس نے قیمت میں مزید 24 روپے کا اضافہ کیا تھا اور ایک روز قبل اس نے 15 روپے اضافے کا اعلان کیا تھا۔

قیمتوں میں مسلسل اضافے سے ملک میں ایک ماہ کے دوران پیٹرولیم مصنوعات کی کھپت میں مجموعی طور پر 11 فیصد کمی دیکھنے میں آئی ہے۔ ڈیزل کی کھپت میں 16 فیصد کی واضح کمی آئی، اسی طرح مٹی کے تیل کی کھپت میں 12 فیصد اور پٹرول کی کھپت میں 2 فیصد کی کمی واقع ہوئی۔ جمعہ کو آئل کمپنیز ایڈوائزری کونسل (OCAC) کی طرف سے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق، ملک کی تیل کی فروخت 22.1-2021 کے مالی سال میں 11 فیصد بڑھ کر 22.5 ملین ٹن ہو گئی۔

تاہم جون 2022 کے دوران پیٹرولیم مصنوعات کی فروخت گزشتہ سال کے اسی مہینے میں 1.9 ملین ٹن کے مقابلے میں جمود کا شکار رہی۔ تیل کی صنعت کے مطابق، ڈیزل اور پیٹرول کی اونچی قیمتوں نے پچھلے مہینوں کے مقابلے میں شہر کے اندر اپنے دوروں میں زبردست کمی کرکے لوگوں کو ایندھن کی قیمتوں میں کمی کرنے پر مجبور کیا۔ توقع ہے کہ جون کے آخر میں پیٹرول کی قیمتوں میں تازہ ترین ترمیم کے بعد ایندھن کی فروخت میں مزید کمی آئے گی۔

ہائی اسپیڈ ڈیزل (HSD) کی فروخت جون 2022 میں آٹھ فیصد کمی کی عکاسی کرتی ہے جو کہ 713,000 ٹن تک پہنچ گئی، پچھلے سال کے اسی مہینے کے مقابلے میں جب 776,000 ٹن HSD فروخت ہوئی تھی۔ جون میں پٹرول کی فروخت 10 فیصد کم ہو کر 702,000 ٹن رہ گئی جو پچھلے سال کے اسی مہینے میں 776,000 ٹن تھی۔ جون کے مہینے میں ڈیزل اور پیٹرول کی فروخت میں بھی رواں سال مئی کے مقابلے میں بالترتیب 16 فیصد اور 12 فیصد کی کمی واقع ہوئی۔

تاہم فرنس آئل نے گزشتہ سال کے اسی مہینے کے مقابلے میں جون کے مہینے میں 33 فیصد کا زبردست اضافہ ریکارڈ کیا جس کی وجہ سے بجلی کی پیداوار کی زیادہ مانگ تھی کیونکہ گیس کی قلت نے حکومت کو اجناس کی طرف جانے پر مجبور کیا تھا۔ پیٹرولیم مصنوعات کی کمپنی وار فروخت سے پتہ چلتا ہے کہ پاکستان اسٹیٹ آئل نے گزشتہ مالی سال میں 29 فیصد اضافہ کیا، اس کے بعد اٹک پیٹرولیم لمیٹڈ اور شیل پاکستان نے بالترتیب 22 فیصد اور 14 فیصد اضافہ کیا، جب کہ مالی سال 2022 میں ہیسکول کی فروخت میں 66 فیصد کی کمی واقع ہوئی۔

Updated: July 2, 2022 — 1:44 pm

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Nts results © 2021 Disclamier PrivacyPolicy Contact Us